Category Archives: News Report

Natural allies: People and media -by Akram Shaheedi

Media-in-Pakistan
I am surprised and shocked like many others belonging to the journalistic community and from the civil society over the recent utterance of the Minister of Information Pervez Rasheed in which he said that, ‘freedom of press owes to army.’ I think and wish my dismay is without foundation because of my extraction of the meaning without taking into account the total context. I wish that is the case otherwise my apprehensions of him and the government teetering on the edges gets credence despite the former President Asif Ali Zardari’s support to the “Lion” who should not be suffering from the fear of the unknown syndrome.

The minister of information’s words deciphered in isolation match the comical expression portrayed in a caricature published in a major English daily a few days back depicting the lion licking the army boots. Has he realized that with his remarks he was faintly belittling the sacrifices rendered by journalists, civil society and human right organizations in the arduous struggle for the freedom of press? He is advised to disown and clarify his comments because he cannot be oblivious of the anguish and pain of lashing inflicted on journalists for the struggle. I stand corrected, if he has already done so his silence will be assumed as an endorsement.

He, at the same time, was also bailing out the perpetrators who not only denied the freedom of expression but also made the journalists and the supporters subject of their witch hunting and worst type of political victimization. He should remember the scars of whipping on the bodies of many respectable journalists like Khawar Naeem Hashmi, who preferred to bear the agony but refused to surrender the cause, a worthwhile cause to pursue. A few are still alive who bore the brunt of the brutalities of General Zia and General Ayub Khan.

Putting the journalists in jails could not weaken their resolve and the struggle continued. General Musharraf although liberalized media to a great deal but he tried to chain it during his last days in a bid to perpetuate his rule. The civilian governments in the past also did not lag behind in curbing the press as almost all the big media houses faced their wrath as well. The hatred of General Zia against journalists and the freedom of expression can be judged from when he said on March 22, 1982, “I could close down all the newspapers, say, for a period of five years, and nobody would be in a position to raise any voice against him. If they try to organise a meeting or procession, I will send them to jail.”

The tormentor had perished with heavy baggage of history that his legacy would bear for all times to come. But the movement for the freedom of expression had got intensified with the passage of time and it was bound to succeed because of its inevitability. Today, Pakistani media enjoys far more independence and has surfaced as the fourth pillar of the state in the real sense. No one can wrest it from the people of Pakistan who have taken its ownership with total commitment and is going to stay here because it is non-negotiable.

The minister of information is the face of the government who projects and defends the policies of the government in a most articulate way with the aim of popularising them to earn acceptability of all and sundry. The popularity of the government’s achievements and its position on national and international issues must not suffer due to default. The media, social media and indeed the whole international community scrutinize every move and step with critical appraisal. Therefore, he should be an embodiment of equanimity, articulation, knowledge and above all using well guarded words because his words are the words of the government being a chief spokesman of the government. His sense of proportion and sense of humour should compliment each other in the best interest of the government’s publicity objectives. But his laughable comments could raze his and government’s image to the ground incapacitating him to brush the dust off the face of the government he represents. The present tiff between media and the institution has put the incumbent minister information in a big test and its desirable denouement will earn him accolades of all of us.

The minister of information of an elected government should be in “over my dead body” posture to defend freedom of expression ready to twist any arm to submission that extends to stifle the freedom as guaranteed in Article 19 of the Constitution. He should not be carried away by sentiments of appeasing the relatively powerful one at the expense of the cause that is and should be perceived unequivocally as a great source of strength and courage even in the face of tyrant authority. That does not mean he should jettison the practice of balancing act even on the horns of a dilemma. He must not tumble because his fumbling is fraught with the dangers of falling down awkwardly.

One cannot believe that a minister of information of an elected government, in particular, would subscribe to such views those strike the root of the cause that he should be fiercely and forcefully espousing without fear or favour. Imagine a minister of the elected government saying that freedom of press in Pakistan owes to the army because the army is in the way of Taliban. I am sure his comments were only relevant in the context of that particular day because no army howsoever strong it may be can win a war without the support of the people.

Only the elected government, parliament, judiciary, media and the army are a winning combination when they move in unison. Its irrefutable veracity can be very well judged from the military and political debacles inflicted on this nation through the annals of history during successive dictatorships.

The army chief’s address at the occasion of the martyrs’ day a few days back was enough to allay fears of the unknown when he declared and underscored the institutional commitment to the freedom of press and responsible journalism. His speech’s contents regarding the supremacy of the Constitution and support for democracy were very reassuring. Teaching lesson methodology in domestic affairs hardly bears fruit. Persuasion and engagement do.

National consensus on democracy, independence of judiciary and the freedom of press is total and therefore is far more reassuring because that matches the vision of the founder of the nation and aspirations of the people.

Advertisements

مردِحُرسے ایک اور معافی کی درخواست

zardari say aik aur maafi

تحریر: امام بخش

 مردِ حُر آصف علی زرداری کے خلاف جھوٹے کیسز اور  پروپگنڈے کا طوفان برپا کرنے والوں یعنی سابق صدر غلام اِسحٰق خان، نوازشریف، پرویزمشرف اور سیف الرحمٰن کی معافیاں اور اِقرار جُرم  پہلے ہی پاکستان کی تاریخ کا حصّہ ہیں۔ اَب سابق آئی ایس آئی چیف جنرل(ر) احمد شجاع پاشا (میمو گیٹ فیم +بابائے تحریک اِنصاف) کی طرف سے نئی معافی کا اِضافہ ہوا ہے۔ جس میں موصوف نے مردِ حُر سے التجا کی ہے کہ” مجھے معاف کردیں، غلطی ہوگئی، اس  نے جو کچھ کیااپنے باس کے کہنے پرکیا”۔

 یاد رہے  کہ میمو گیٹ شاہکار ڈرامے کے معماروں نے اپنی پہاڑ ایسی ناکامی چُھپانے کے لیے اپنے جموروں ، میڈیا اور عدلیہ  کے ذریعے گردوغبار اور پراپیگنڈ ے کا ایسا طوفان برپا کیا  کہ حقیقت خرافات میں کھو  گئی۔یاد رہے کہ سب سے  بڑے جَمُورے کاکردار اِس وقت کے وزیرِاعظم نوازشریف نے ادا کیا تھا ، جب اُنھوں نے جاتی عمرہ میں ایک سینئر فوجی اہلکار  سے ملاقات  کرنے کے بعد بڑی دھوم دھام سے دیدہ و دل بھی فرش راہ کی مکمل تصویر آزاد عدلیہ میں میمو پر پٹیشن دائر کی۔ یعنی سب کرداروں نے مِل کر اِس ابرِ غلیظ میں آصف علی زرداری کے خلاف ہر ترکیب، حربہ اورگٹھ بندھن آزمایاگیا ۔ حتٰکہ دسمبر 2011ء  میں میموگیٹ کےگردوغبار کے دوران  صورتحال  یہ تھی کہ آصف علی زرداری کوایوان صدر کے پچھلے حصے میں اپنے سونے کے کمرے میں بندوق لے کر ساری ساری رات بیٹھنا پڑتا تھا ۔  زرداری نے” اصل حکمرانوں” کو پوری طرح باور کرا دِیا کہ وہ سرنڈرنہیں کریں گے،استعفٰی نہیں دیں گے، گرفتاری نہیں دیں گے، صرف لڑیں گے، گولی کا جواب گولی سے دیں گے اور  اگر اُنھیں ہٹانا ہے تو  آئینی طریقے سے ہٹایا جائے۔ ایک دن تو آصف علی زرداری نے  اپنے لوگوں سے یہ بھی کہا کہ ہو سکتا ہے  حملہ آور مجھے گولی مار کر کہیں کہ میں نے خود کشی کر لی ہے لیکن گواہ رہنا ، میں لڑتے ہوئے مروں گا،  خود کشی نہیں کروں گا۔

 مردِ حُر آصف علی زرداری نے “اصل حکمرانوں”  اور ان کے حواریوں کو قدم قدم پر مایوس کیا۔اُنھوں نے ہر وار کو مردارنہ  وار سینے پر سہا ۔ اُنھیں عدلیہ، میڈیا،ملٹری اور حزب اختلاف سے چومکھی لڑنا پڑی۔   یہ زرداری کا تحمل، صبراور دوراندیشی تھی جو جمہوریت  بچاتی رہی۔ ہر  اوچھے وار  کو بڑے تحمل سے برداشت کیا ۔ اگر 2008ء سے لےکر آج تک کی تاریخ پر نظر ڈالی جائے تو یہ بات  روزِروشن کی طرح  واضح ہوجاتی ہے کہ مردِحُر ایک ایسا  سبک دست جوگی ہے، جس نے  ہماری اسٹیبلشمنٹ کے بڑے بڑے اور زہریلے اژدہوں کی زہر کو بتدریج کم  کیا ہے ۔ اگر وطنِ عزیز میں  یہ عمل جاری رہےتو انشاءاللہ  بہت جلد یہ  بے ضرر کیچوؤں میں تبدیل ہوجائیں گے اورذلتوں مارا یہ  پاکستان ہرگز نہیں رہے گا، جو اِس وقت ہے۔

 میمو گیٹ کے آرکیٹیکٹ  کی تازہ معافی  سے ہمیں مردِ حُر کے بدترین مخالفین کی طرف سے ماضی میں اِقرارِ جرم اور معافیاں یاد آگئیں۔ سب سے پہلے ہم سابق صدرغلام اسحٰق خان کا ذکر کریں گے۔ جنھوں نے  محترمہ  بینظیر بھٹو کی  حکومت کی 1990ءمیں برطرفی کےبعد آصف علی زرداری پر کرپشن کے لاتعداد الزامات لگا کر اُنھیں جیل میں بند کردیا۔  مردِ حُر رکنِ قومی اسمبلی بنے مگر اِس عرصہ میں وہ جیل میں ہی  پابند سلاسل  رہے۔تین سال بعد 1993ء میں کوئی ایک بھی الزام ثابت کئے بغیر غلام اسحٰق خان نے اپنا تھوکا سرِعِام چاٹ کرآصف علی زرداری کو رہا کر کے نگراں وزیرِ اعظم میر بلخ شیر مزاری کی کابینہ میں وزیر بنا کر حلف لے لیا۔ اِس طرح انھوں نے بلاواسطہ طورپر اقرارکیا کہ مردِحُر کے خلاف سب کیسز جُھوٹے بنائے گئے تھے۔

 نواز حکومت کے دُوسرے دورِحکومت میں  اِحتساب  سیل کےسابق چیئرمین  سیف الرحمٰن نے  محترمہ بینظیر بھٹو اور آصف علی زرداری کے خلاف  لاتعدادریفرنس دائر کئے۔ وہ نوازشریف کی خواہش پر شہباز شریف کے ساتھ مل کر ججوں کو فون کر کےمحترمہ بینظیر بھٹو اور آصف علی زرداری کو زیادہ سے زیادہ سزا دِلوا کر عبرتنا ک مثا ل بنانا چاہتے تھے۔ یہ وہی پست فطرت سیف الرحمٰن تھے،  جو محترمہ بے نظیر بھٹو اور آصف علی زرداری کے بیڈروم کی ویڈیوز تک بنانے  کی شدید خواہش رکھتے تھے۔ سیف الرحمٰن کے بارے میں میاں شہباز شریف خوداِقرا کر چکے ہے کہ وہ لاہور میں ایک عدالتی پیشی کے دوران آصف علی زرداردی کو قتل کرنے کا منصوبہ بھی  بنا چکے تھے۔مگر جب  پرویز مشرف کے دور میں ایک بار آصف علی زرداری کو جیل سےراولپنڈی عدالت میں پیشی پر لایا گیا  تو مردِحر کے کمینگی کی حد تک دُشمن سیف الرحمٰن کوبھی  ہتھکڑیوں میں  وہاں پیشی پر لایا گیا (جنھیں  نواز حکومت کا 1999ء میں تختہ اُلٹنے بعد گرفتار کیا گیا تھا)۔ سیف الرحمٰن  نےجیسے ہی  آصف علی زرداری کو دیکھا تو اُن  کے قدموں میں  گرگئے اوردھاڑیں مار مار کر معافیاں  مانگنے لگے،  وہیں سیف الرحمٰن کی ماں بھی موجود تھیں ، انھوں نے بھی معافی کی درخواست کی تو زرداری نے کوئی گلہ کئے بغیر فوراً معاف کردیا۔

 فروری 2008ء کے انتخابات کے بعد  مردِ حُر نے سیاسی تدبرسے سابق ڈکٹیٹر کو بتدریج بند گلی کے آخری سِرے تک پہنچا دیا۔ حالات اِس نہج پر پہنچ چکے تھے کہ ڈکٹیٹر کو اپنی وردی (جسے وہ اپنی کھال سےتشبیہ دیتے تھے) اُتر نے کے بعد اصلی کھال اُترنے  کی فکر پڑ گئی۔ جس کی وجہ سے ڈکٹیٹر اپنے ادارے کی مدد سے معافی تلافی کراتے ہوئے بیرونِ سُدھارگئے اور اُس وقت تک واپس تشریف نہیں لائےجب تک پاکستان پیپلز پارٹی کی حکومت رہی۔  مگر نگران حکومت کے بننے کے پہلے ہی دن سابق ڈکٹیٹرپرویز مشرف واپس پاکستان لوٹ آئے۔ اِس سے قبل2010ء میں سابق ڈکٹیٹر پرویز مشرف نے لندن میں سارے میڈیا کے سامنے مردِحُر کے مخالفین کے لیے ہاٹ کیک یعنی سوئس کیسز  کے بارےمیں کُھلا اعتراف کیا کہ یہ کیسز فرضی داستان ہے، اُن کی حکومت نے سوئس حکومت سے بار بار رابطہ کیا مگر جواب میں بتایا گیا کہ وہاں کو ئی رقم نہیں پڑی ہوئی، سوئس حکومت کا کہنا تھا کہ یہ سب داستانیں اُنھیں پاکستانی میڈیا کے ذریعے سننے کو ملتی ہے۔ مشرف کا کہنا تھا کہ ان فضول کیسز کی بیرونِ ملک تفتیش کرنے سے حکومت پاکستان کے کروڑوں روپے خرچ ہوئے مگر پاکستان کو ایک دھیلے کا بھی  فائدہ نہیں ہوا۔

 نوازشریف وہ شخصیت ہیں جنھوں نے محترمہ بینظیر بھٹو اور آصف علی زرداری کے خلاف  قابلِ نفرین حد تک پروپگنڈا کیا اور کیسز کا انبار لگا دیا۔ مردِ حُر نواز شریف کے پہلے دورِحکومت میں 1990ء سے 1993ء تک جیل میں بند رہے۔ بعد میں 1996ء میں مردِ حُرکو ایک بار پھر گرفتار کرلیا گیا (مردِ حُر کی یہ قید 2004ء تک رہی)۔ اسے تقدیر ایزدی کا کمال ہی کہئے کہ جب آصف علی زرداری کراچی جیل میں بند تھے تو اُنھیں پابند سلاسل کرنےکے ذمے دار اور سب سے بڑے کردار میاں نوازشریف خود اپنی حکومت کا  1999ء میں تختہ اُلٹنے کے بعدروتے دھوتے وہیں آن قیدی بنے اور نوید چوہدری کو معافی کی درخواست کا پیغام دے کر آصف علی زرداری کے پاس بھیجا ۔ زرداری پیغام سُن کر مُسکرائے اور لمحہ بھر کو سوچ8ے بغیر نوازشریف کو معاف کردیا۔

اب  ہم سہیل وڑائچ کی کتاب “غدار کون؟ نوازشریف کی کہانی ان کی زبانی”  کا حوالہ دینا چاہتے ہیں ۔جوانھوں نے جون 2006ء میں لکھی تھی۔ کتاب کے مکمل ہونے کے بعد نوازشریف اور ان کی فیملی ممبرز نے کتاب کا  مسودہ بار بار پڑھا-  پھر اسے  ناروے کے سابق سفیر عطاءالحق قاسمی (یہ وضاحت کرنا بے کارہوگا کہ اِس صحافی کا شریف فیملی سے کیا تعلق ہے) نے کتاب کے حتمی مسودے کو تفصیل سے پڑھنے اور دیکھنے کے بعد باقاعدہ اشاعت کی اجازت دی۔

 مذکورہ بالا کتاب کے صفحہ 137 پرمحترمہ بینظیر بھٹو اور آصف علی زرداری  کے مقدمات کے بارے میں نوازشریف سے پوچھے گئے سوال اور جواب من و عن حاضر ہیں:

سوال: آپ کے دوسرے دور میں کئی پیچیدہ سیاسی مسائل پیدا ہو ئے آپ نے احتساب کا ایسا طریق کار اپنایا کہ اپنی قائد حزب اختلاف بے نظیر بھٹو کا پتہ ہی صاف کر دیا کیا یہ جمہوری رویہ تھا؟

 نوازشریف: احتساب کا  طریق کار غلط تھا۔ ہمیں اس حوالے سے اکسایا گیا تھا۔ فوج اور آئی ایس آئی کا ہم پر دباؤ تھا۔ جان بوجھ کر ہم سے بے نظیر اور اپوزیشن کے خلاف ایسے اقدامات کروائے گئے تاکہ سیاست دانو ں کا اعتبار ختم ہو جائے۔

 پس ثابت ہُوا کہ سانچ  کو آنچ نہیںاور سچے لوگوں کو بظاہر اکثر پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے مگر سچ آخر سچ ہوتا ہے اور ثابت ہوکر ہی رہتا ہے۔  مگر یاد رہے کہ سچ اُن لوگوں کا کچھ نہیں بگاڑتا جونفرت کو ہی ایمان، آئین اور قانون سمجھتے ہیں کیونکہ اُن کا اپنا پسندیدہ جھوٹ ہی  ہمیشہ سچ ٹھہرتاہے۔ اُن بے چاروں کی بھی مجبوری ہے کیوں کہ بغیر وجہ کی نفرت سے آنکھیں اندھی ہوجاتی ہیں، کان بند ہو جاتے ہیں اوردلوں پر مہرے لگ جاتے ہیں۔

 آخر میں یہ ذِکر کرنا اہمیت سے خالی نہیں ہوگا کہ مردِ حُر آصف علی زرداری کے بد ترین مخالفین میں سے دوکردار ابھی باقی ہیں جن کا اِقرار جُرم اور معافی کی درخواستیں  آنا باقی ہیں۔ اِن میں سے ایک کردارتو میمو گیٹ کے آرکیٹیکٹ کے باس ہیں ، جو ایوب خان، یحیحیٰ خان، ضیاءالحق اور پرویز مشرف سے  بڑے کایا ں نکلے  اوراپنا نا م  “رِجسٹر” کرائے بغیر ہی چھ سال تک وطنِ عزیر پر بھرپور حکومت کر گئے ۔ دُوسرے کردارجھانولی نظر کے مالک ایک “صادق و امین فرشتے”  ہیں جنھوں نے اپنے فرائض پسِ پشت ڈال کر کمرہ نمبر ایک سے سپریم کورٹ  آف پاکستان کو مردِ حُر کے خلاف  پروپگنڈا سیل  کے طور پر چلایا۔ بہت سے بلاوجہ قانونی پھندے تیار کئے، حکومت  کے ہرکام میں روڑے اٹکائے ، قانونی موشگافیوں میں اُلجھا کر پریشان رکھا  اور آئینی بھول بھلیوں میں بھٹکانے کی بھرپور کوشش کی ۔المختصران کی سیاہ کاریوں کا دائرہ افق تا افق پھیلا ہوا ہے۔

 اُمیدِ قوی  ہے کہ مستقبل میں مذکورہ بالا دو  کِرداروں کی طرف سےبھی اِقرارِ جُرم سے مردِ حُر کی حقانیت ایک بار پھر ثابت گی۔ اگر اِنھوں نے اپنی زُبان سے اعترافِ جُرم نہ بھی کیا توکو ئی حرج نہیں کیونکہ تاریخ کے جبر سے کوئی مفر نہیں۔

ڈکٹیٹر کے خلاف غداری کا مقدمہ اور چیف پراسیکیوٹر اکرم شیخ

تصویر

تحریر: امام بخش

یُوں تو وطن ِ عزیز  کے چند”مایۂ نازقانون دان” سابق ڈکٹیٹرپرویز مشرف کی مداح سرائی اور بے گناہی  کےمُدت سے الاپ چاری ہیں مگر  ڈکٹیٹر کے خلاف غداری کے مقدمے کے چیف پراسیکیوٹر اکرم شیخ نے ہمیں حیرت زدہ کر  دیا  جب انھوں نے  عدالت میں استغاثہ کی طرف سے  کہا کہ اُنھیں پرویز مشرف کی وفاداری پر کوئی شک نہیں ہے۔ وہ سابق آرمی چیف بھی رہے ہیں،  انھیں کبھی غدار نہیں کہا گیا بلکہ ملز م کے وکلاء اس کو غداری کا مقدمہ کہہ رہے ہیں۔  انھوں نے مزید کہا کہ عدالت کے سامنے غداری کا نہیں بلکہ آئین شکنی کا مقدمہ ہے۔ 

چیف پراسیکیوٹر نے یہی پر بس نہیں کیا بلکہ رحم طلب نظروں کے ساتھ چل کر ملزم ڈکٹیٹر کے پاس  گئے  اورفدویانہ انداز میں التجا کی کہ وہ اس مقدمے میں اُن کے ضمانتی میجر جنرل ریٹائرڈ راشد قریشی کے کلاس فیلو ہیں۔ اُن کے دل میں اُن کے لیے بےحد احترام ہے اور اُن کے لیے کسی طور پر بھی تعصبانہ رویہ نہیں رکھتے۔ 

قوم کی یادداشت کو کمزور سمجھنے والے  چیف پراسیکیوٹر کو ہم  یاد دہانی کراتے چلیں کہ عدلیہ،  وفاقی حکومت اور اُن کی ذات   شریف ڈکٹیٹر کے خلاف غداری کے مقدمے کے بارے میں کیا موقف رکھتے رہے ہیں: 

1۔ 24 جون 2013 ء کو وفاقی حکومت نے پرویز مشرف کے خلاف غداری کا مقدمہ چلانے کا اعلان کیا  کہ حکومت اس ضمن میں سپریم کورٹ کے فیصلے پر عمل درآمد کرے گی جس کے تحت3 نومبر 2007ء کو اُس وقت کے صدر اور آرمی چیف جنرل پرویزمشرف آئین کو معطل کر کے غداری کے مرتکب ہوئے تھے۔ 

2۔ 3جولائیء 2013 کو سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت سے کہا کہ وہ پرویز مشرف کے خلاف آئین کے آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی جلد مکمل کرے۔ 

3۔ 17 نومبر 2013ء  کو  وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے اعلان کیا کہ حکومت سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے خلاف آرٹیکل چھ کے تحت مقدمے کا آغاز کر رہی ہے۔ 

4۔ 19 نومبر2013ء کوحکومتِ پاکستان نے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف آئین کے آرٹیکل چھ کے تحت غداری کے مقدمے کی سماعت کے لیے جسٹس فیصل عرب، جسٹس یاور علی اور جسٹس طاہرہ صفدرپر مشتمل تین رکنی خصوصی عدالت تشکیل دے دی۔ 

5۔ 20 نومبر2013 پاکستان کے اٹارنی جنرل منیر اے ملک نے کہا کہ غداری کے مقدمے میں حکومت کے پاس اتنے ٹھوس شواہد موجود ہیں کہ پرویز مشرف کو اس مقدمے میں سزا ہو سکتی ہے۔ 

6۔ 21 جنوری2014ء کو اکرم شیخ نے  خود فرمایا کہ سابق فوجی حکمران کے خلاف دستاویزی ثبوتوں کی بنیاد پر غداری کا مقدمہ دائر کیا گیا ہے۔ 

تعجب ہے کہ اب چیف پراسیکیوٹر اکرم شیخ فرمارہے ہیں کہ اُنھیں  پرویز مشرف کی وفاداری پر کوئی شک نہیں ہے اور وہ اُن کے لیےمحترم ہیں اوراُن کے کے خلاف  عدالت کے سامنے غداری کا نہیں بلکہ آئین شکنی کا مقدمہ ہے۔ کوئی تو  اِس”  عظیم قانون دان” سے پوچھے کہ کیا  آئین شکنی سے بڑی بھی کوئی غداری  ہوتی ہے؟ 

اب ہم دیکھتے ہیں کہ آرٹیکل چھ کیا ہے؟جس کے تحت  ڈکٹیٹر کے خلاف کاروائی شروع کی گئی ہے۔  آرٹیکل چھ، جس کا عنوان ہی  ‘سنگین غداری’ ہے، مِن ّ و عَن حاضر ہے ۔ جسے قانون سے نابلد  کوئی بھی معمولی پڑھا لِکھا آدمی  ماہر قانون دانوں کی مدد کے بغیرہی  آسانی سے سمجھ سکتا ہے: 

1۔ کوئی شخص جو طاقت کے استعمال یا طاقت سے  یا دیگر غیرآئینی ذریعے سے دستور کی تنسیخ کرے  یا تنسیخ کرنے کی سعی یا سازش کرے، تخریب کرے یا تخریب کرنے کی سعی یا سازش کرے سنگین غداری کا مجرم ہوگا۔ 

2۔ کو ئی شخص جو شق نمبر ایک میں مذکورہ افعال میں مدد دے گا یا معاونت کرے گا، اِسی طرح سنگین غداری کا مجرم ہو گا۔ 

3- مجلس شوریٰ یا پارلیمنٹ بذریعہ قانون ایسے اشخاص کے لئے سزا مقرر کرے گی جنہیں سنگین غداری کا مجرم قرار دیا گیا ہو۔ 

آثار بتاتے ہیں کہ وفاقی حکومت کے  سابق ڈکٹیٹر کے خلاف مقدمے میں ملٹری کی ہدایات  کے  عین مطابق عمل کرنے کے طرزعمل، ججوں کے ساتھ ساتھ حکومتی وکیلوں کو ڈکٹیٹر کے وکیلوں کی طرف سے جھڑکیوں اور گُھوریوں نے اکرم شیخ کو پوری طرح سمجھا دیا ہے کہ نوازشریف نے پراسیکیوٹرشپ کی کلغی کے جھانسے میں اُنھیں پھنسا کر ایک بار پھرکراری دُھلائی کا اعلٰی اہتمام کیا ہے، جیسا کہ پچھلے دورِ حکومت میں نُونیوں نے سپریم کورٹ کی راہ داریوں میں اکرم شیخ  کے سر پر وزیرِ قانون   اور  اٹارنی جنرل بننے کی دُھن جُوتا ٹھکائی کا شاندار عمل فرما کر اُتاری تھی۔ 

ہمیں توبے چارے اکرم شیخ پر ترس آرہا ہے۔

صحافی سچا ئی کو عوام تک پہنچا تے ہیں اسی لئے دہشت گر د عناصر اور مفاد پر ست خوف زدہ ہو کر اس طرح کی کارروائیاں کر تے ہیں. علامہ یو سف اعوان

1015445_479576702149156_1345808491_o
لاہور ( سپیشل رپورٹر ) پاکستان پیپلز پارٹی علما ء و مشائخ ونگ پنجاب کے صدر و رُکن اسلامی نظر یاتی کو نسل پیر علامہ یو سف اعوان نے معر وف صحافی رضا رومی پر حملے کی سخت الفاظ میں مذ مت کر تے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت صرف جھوٹے دعوے کر نے میں مصر وف ہے جبکہ دہشت گرد سر عام گھوم رہے ہیں جہاں ملک کو تحفظ فراہم کرنے والے اور صحافی و دیگر ہی محفوظ نہیں ہیں انہوں نے کہا کہ پو لیس صرف بھاری تنخواہیں لیتے ہوئے کر پشن میں مصروف ہے اور عوام سڑکوں پرمر رہی ہے حکومت عوام کو تحفظ فراہم کر نے میں مکمل طور پر ناکام ہے انہوں نے کہا کہ صحافی سچا ئی کو عوام تک پہنچا تے ہیں اسی لئے دہشت گر د عناصر اور مفاد پر ست خوف زدہ ہو کر اس طرح کی کارروائیاں کر تے ہیں اُن کا کہنا تھا کہ صحافیوں کے حوصلے بلند ہیں اور وہ اس طرح کی کارروائیوں سے نہیں ڈرتے مگر حکومت کو فوری طور پر کارروائی کر تے ہوئے ملزمان کو گرفتار کر نے کیلئے اقدمات کر تے ہوئے غفلت بر تنے والے پولیس افسران کو فارغ کر دینا چاہیے

http://www.dailypakistan.com.pk/E-Paper/Lahore/2014-03-30/page-12/detail-27