PPP will not rest till culprits of Model Town incident are not brought in the dock, Mian Manzoor Wattoo‏

201210182548_samaa_tv
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President Punjab PPP, has said that the Gullu Butt have been awarded eleven years of punishment and fine for smashing windscreens of vehicles in June this year adding but what about those who murdered fourteen innocent civilians and injured ninety others through the use of blatant Punjab police force in the Model Town incident.

They are still free and the iron hand of law had failed to grab them by the neck so far to bring them in the dock to face justice, he added this in a statement issue from here today.

He observed that it was the travesty of justice and the people would start hating such a justice system which was essentially discriminatory in nature and therefore unable to meet the imperatives of justice.

He cited the one case during the Prophet Muhammad (peace be upon him) times in which a women was sentenced of chopping of her hand on the measurable crime she committed. The Prophet (PBUH) rejected the submission made by the elders to pardon her by asserting that He would award the same punishment if His own daughter had committed the crime of the same nature.

Mian Manzoor Ahmed Wattoo maintained that it was exceptionally a shinning example of good governance and an unprecedented case of administration of justice in the supreme sense devoid of any layer of discrimination.

The fair application of law is the basis of a civilized society as the discrimination in the enforcement of law will tantamount to the law of jungle where might is always right, he observed.

He maintained that the societies may survive through the suppression and persecution of a tyrannical system but societies based on flawed justice system would meet inevitable disintegration without a fear of contradiction.

He expressed the resolve of the PPP not to rest till the victims of the Model Town incident were not awarded justice and the culprits were not given punishment of the crime they committed.

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے یہاں سے جاری ایک بیان میں کہا ہے کہ گلو بٹ کو گاڑیوں کے شیشے توڑنے کی پاداش میں 11 سال کی سزا اور جرمانہ بھی ہو گیا ہے لیکن جنکے حکم پر ماڈل ٹاؤن میں اس سال جون کو 14 لوگوں کو قتل کیا گیا اور 90 سے زائد لوگ زخمی ہوئے وہ ابھی تک قانون کی گرفت سے آزاد ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایسے انصاف کے نظام سے لوگ نفرت کرنا شروع کر دیتے ہیں جہاں پر امیر کے لیے کوئی اور قانون ہو اور غریب کے لیے کوئی دوسرا قانون ہو اور نظام عدل ایک مذاق نظر آئے ۔ میاں منظور احمد وٹو نے حضرت محمدﷺ کے زمانے کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ انکے زمانے میں ایک خاتون کو اسکے ہاتھ کاٹنے کی سزا دی گئی۔ وہاں کے معززین نے آنحضرت ﷺ سے التجاء کی کہ اس عورت کی سزا معاف کر دی جائے اس پر حضور نے فرمایا کہ اگر اسی طرح کے جرم میں انکی بیٹی بھی ملوث ہوتی تو وہ انکی سزا بھی معاف نہ کرتے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ اس واقعہ سے اسلام میں نظام عدل کی اسلامی معاشرے میں اہمیت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مہذب معاشرے میں قانون کی بالادستی ہوتی ہے اور یہ سب کے لیے برابر ہوتا ہے جن معاشروں میں قانون کی حیثیت امتیازی ہو وہ معاشرہ ایک ایسا جنگل ہوتا ہے جہاں پر غلط اور صحیح کا تعین طاقت سے ہی ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ معاشرہ ظلم وستم کے نظام سے تو سرخرو ہو سکتا ہے لیکن ایسا معاشرہ جسکی بنیاد انصاف پر مبنی نہ ہو وہ تباہی سے بچ نہیں سکتا۔ میاں منظور احمد وٹو نے پیپلز پارٹی اس عزم کا اعادہ کیا کہ وہ اسوقت تک چین سے نہیں بیٹھے گی جب تک ماڈل ٹاؤن کے قاتلوں کو قرار واقعی سزا نہیں مل جاتی۔

Advertisements

Local bodies’ Elections should be held soon, demands Tanvir Ashraf Kaira‏

1959417_460777864059974_3712935093294000977_n
Tanvir Ashraf Kaira Secretary General PPP Punjab, has demanded the Punjab Government to hold local bodies elections in the province early adding that the PPP was fully prepared to contest such elections at all levels.
He said this in a statement issued from here today adding that the Pakistan Tehrik-e-Insaf should not boycott the local bodies’ elections because such decision would hit the very basis of the local government affecting its representative character.
He maintained that the track record of the present Punjab Government regarding the local bodies was hopelessly disappointing because it did not want to devolve powers at the grassroots level.
He observed that the present government in Punjab had managed the postponement of local bodies’ elections on one pretext or another by bringing amendments in the law.
He pointed out that the government of Punjab diverted the local bodies’ funds to complete the projects in big cities and thus depriving the rural population from the delivery of services so scarce there. Lahore Metro Bus project was completed by diverting the local bodies’ funds by the government, he stated.
He maintained that the reconciliation of the funds used by the government other than the local bodies’ projects was still pending and the Auditor General had raised objections in the context of as not valid charge.
He pointed out that the recent survey conducted by PILDAT suggested that the people were heavily in favor of local government to address the local problems through their representatives of local bodies.
He added that he was not surprised by the survey because the Punjab Government had treated the rural population on discriminatory basis and provided the facilities to the urban population at their expense.
He concluded that such development strategy was flawed because it meant to create tension between the rural and urban population that impaired the process of integration of the people for the betterment of the nation.

پیپلز پارٹی پنجاب کے سیکرٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ نے پنجاب حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ صوبے میں جلد از جلد مقامی حکومتوں کے انتخابات کرائے جسکے لیے پیپلز پارٹی پوری طرح تیار ہے۔ انہوں نے یہ بات آج یہاں سے جاری ایک بیان میں کہی۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کو بھی مقامی حکومتوں کے انتخابات لڑنے چاہئیں کیونکہ انکے بائیکاٹ سے مقامی حکومتوں کی نمائندہ حیثیت ایک حد تک متاثر ہو سکتی ہے۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ موجودہ پنجاب حکومت کا مقامی حکومتوں کے ضمن میں ٹریک ریکارڈ مایوس کن ہے کیونکہ یہ نچلی سطح تک اختیارات کی منتقلی میں مخلص نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسی لیے پنجاب حکومت نے لوکل باڈیز کے انتخابات نہ کروانے کے لیے کئی بہانے تلاش کئے اور لوکل باڈیز ایکٹ میں ترامیم لائیں۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پنجاب کی حکومت نے لوکل باڈیز کے ترقیاتی فنڈز لاہور کی میٹروبس پراجیکٹ پر خرچ کئے اور اسطرح دیہاتی آبادی کو شہری سہولتوں سے محروم رکھنے کی مجرم ٹھہری۔ انہوں نے مزید کہا کہ آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے ان ترقیاتی فنڈز کی منتقلی پر اعتراضات اٹھائے ہیں جسکی وجہ سے لوکل باڈیز کے ترقیاتی فنڈز قوائد و ضوابط کے مطابق استعمال نہ ہونے کی وجہ سے یہ اعتراضات برقرار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پِلڈیٹ کے سروے کے مطابق پاکستان کی بڑی اکثریت لوکل باڈیز کے حق میں ہے اور وہ سمجھتی ہے کہ لوکل باڈیز ہی مقامی مسائل کے حل کا بہترین ذریعہ ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ وہ اس سروے پر حیران نہیں ہیں کیونکہ موجودہ حکومت نے دیہاتی آبادی کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیا ہے جہاں تک شہری سہولتوں کی فراہمی کا سوال ہے۔تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پنجاب حکومت کی ترقیاتی حکمت عملی ناقص ہے کیونکہ اسکی وجہ سے دیہاتی اور شہری آبادی کے درمیان کشیدگی پیدا ہو رہی ہے جو کسی لحاظ سے بھی قوم و ملک کے مفاد میں نہیں۔

Mian Manzoor Wattoo takes exception to politics of resignations

1781999_729189697152677_2853171163038830347_n
Pakistan People’s Party (PPP) Punjab President Mian Manzoor Ahmed Wattoo has said that the Pakistan Muslim League-Nawaz government does not want to accept resignations of Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) parliamentarians as it will worsen the prevailing political crisis.
He expressed these views while addressing new entrants to the PPP during a ceremony at party secretariat on Wednesday.
Advocate Muhammad Hussain from Arifwala announced joining the PPP along with a large number of his supporters.
Wattoo said that the PTI parliamentarians did not want to get their resignations accepted while the government never wanted to accept them because acceptance of resignations would affect the representative credentials of the parliament leading to deepening the crisis further. He said that the PTI did not want to resign from the parliament and that it wanted to keep political cauldron boiling for the sake of party politics.

#PPPIsBack: Chaudhary Muhammad Hussain Advocate joins #PPP

10751666_10205210843216882_111727972_n

عارف والا کے لاہور ہائی کورٹ کے وکیل چوہدری محمد حسین نے اپنے ساتھیوں سمیت آج یہاں میاں منظور احمد وٹو صدر پیپلز پارٹی پنجاب سے ملاقات کے بعد پیپلز پارٹی میں شرکت کا اعلان کیا ۔ یاد رہے کہ چوہدری محمد حسین پہلی دفعہ کسی سیاسی جماعت میں شامل ہوئے ہیں۔ انہوں نے NA-166 سے 2013 ؁ء میں بحیثیت آزاد امیدوار کے انتحاب لڑا تھا۔ میاں منظور احمد وٹو نے انکی شرکت کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس سے اس علاقے میں پارٹی کو فعال بنانے میں بڑی مدد ملے گی۔ اس موقع پر باتیں کرتے ہوئے میاں منظو ر احمد وٹو نے کہا کہ حکومت پاکستان تحریک انصاف کے استعفے منظور نہیں کرنا چاہتی اور حقیقت میں پاکستان تحریک انصاف استعفے دینا بھی نہیں چاہتی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت اس لیے استعفے منظور نہیں کرنا چاہتی کیونکہ اس سے پارلیمنٹ کی نمائندہ حیثیت متاثر ہوگی اور موجودہ بحران مزید شدت اختیار کر جائے گا۔ پاکستان تحریک انصاف استعفے اس لیے نہیں دینا چاہتی کیونکہ یہ پارلیمنٹ کو سیاسی حریفوں کے لیے کھلا نہیں چھوڑنا چاہتی کیونکہ اس سے پی ٹی آئی کی روزانہ سرزنش پارلیمنٹ کے فورم سے ہو گی جسکا وہ دفاع نہ کر سکے گی۔ انہوں نے کہا کہ اگر پی ٹی آئی استعفی دینے میں مخلص ہو تو پھر اسکو کونسی وجہ ممبران کو انفرادی طور پر سپیکر کو ملنے سے منع کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ رولز آف بزنس انفرادی طور پر سپیکر کو مل کر اپنے استعفی کی تصدیق کرنا ہوتی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پی ٹی آئی کے استعفی نہ دینے کی ایک وجہ اور بھی ہے کیونکہ پی ٹی آئی پنجاب میں لیڈر آف اپوزیشن کے عہدے کو کھونا نہیں چاہتی۔ اس سے قبل چوہدری محمد حسین نے کہا کہ پاکستان میں پیپلز پارٹی ہی ایک ایسی سیاسی جماعت ہے جسکا جمہوریت ، آئین اور قانون کی بالادستی کی جدوجہد بینظیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کا منشور پاکستان کو مسائل سے نجات دلا سکتا ہے۔ دوسرے معززین جنہوں نے پارٹی میں شرکت کی، ان میں محمد عدنان، ڈاکٹر عطا ء الحق، محمد ارشد فاروق، ذیشان، چوہدری عبد الوحید اور چوہدری تنویر اقبال شامل ہیں۔

Haider Zaman Qureshi calls on head of S Media Jahanara M Wattoo

IMG_20141029_125717[1]
Pakistan People’s Party (PPP) Senior Vice President South Punjab Haider Zaman Qureshi has visited the PPP Punjab Media office, at the PPP Punjab Secretariat in Lahore, and was briefed by Jahanara M Wattoo about the functioning of a media office in Punjab.

During the hour-long meeting a number of media-related issues were discussed in detail, including the extended cooperation between the Central and Southern Punjab’s media offices as well as getting maximum advantages of new digital media outlets and social networking tools.

Jehan Ara Wattoo said that the Social Media had been set up recently in Lahore adding it was doing good job as Punjab Peoples Party was disseminating its message through modern digital media and gaining the space and acceptance particularity in youth.

Haider Zaman Qureshi appreciated the work of the PPP Punjab media office and expressed hope that the work of social media would grow and more effective in the times ahead.