Bhutto Is Long Dead But Bhuttoism Lives On.!!

Bhutto Is Long Dead But Bhuttoism Lives On.!!

In one of his landmark public speeches Shaheed Zulfiqar Ali Bhutto had said amidst huge non-stop clapping, “Mein Aaap ko Hamesha Yeh Kahta Hoon Ke, Bhutto Ek Naheen Do Hae – Ek Mein Jo Yehan Khara Haey Aur Doosre Aap”, meaning “I have always told you there were two Bhuttos; one is me standing before you and the other Bhutto is all of you”. This statement alone is more than enough describe the kind magical nonpareil connect that he enjoyed with the common men in Pakistan. He was a mesmerizing character who could have a direct access into the hearts and minds of the people whenever he wanted to. Scores of his public addresses along the length and breadth of the country are still a delight to watch and listen to. He indeed was the Quaid-e-Awam – that is the leader of the peoples. One would no disagree here that Pakistan has not seen a public speaker of his caliber and stature ever since. The only other person who came a little close was none other than another Bhutto – his beloved daughter Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto – aka SMBB.

In the words of SMBB, “the most important and the most enduring legacy of the Quaid-i-Awam were raising the consciousness of the people for democracy. He awakened the masses, making them realize they were the legitimate fountainhead of political power. He enlightened the farmer, the industrial worker, the student, the woman and the rest of the common people of their importance and of their right of franchise, which is the definite means of bringing changes for the betterment of the lives of the common people. He was true to his values. When the time came he sacrificed his life but refused to compromise on his lofty ideals. He was fond of saying; “It is better to live like a lion for one day than to live like a jackal for a thousand.” He lived with the courage of a lion, defying death in embracing martyrdom. He said he would show “how a leader of the people lives and dies,” and he did. The world pleaded for his life wanting to save a man whose intellect and contribution to peace and progress was vital to the world community. But a frightened dictator, ignoring the unanimous call of the Supreme Court of Pakistan to spare the Quaid’s life, ordered the execution in the middle of the night. His last words were, “I am innocent.”

Shaheed Baba Bhutto led from the front. His actions, words, speeches, policies, ideals, plans, visions, missions, accomplishments, character, determination, steadfastness, honesty, nationalism & patriotism and above all his love for the country is known as and comprise what is called as Bhuttoism. He instilled in the common men of the country to grains of Bhuttoism. 

And, as Wajid Shamsul Hasan writes in his Op-Ed – Bhutto’s relevance today – “Bhutto had emerged on the national horizon at a time when vintage politicians were on their way out. They had become ineffective and made the task of filling the vacuum more difficult especially when their very survival had become impossible in the new ball game, with rules made to order, by players who represented the powerful Establishment rather than the people of Pakistan.” Yes, indeed he came on the horizons of the Pakistani politics as a pleasant change of winds. Like it is said, “he came, he saw and he conquered”. It is not a matter of dispute any more that he remains the “King of the Pakistani body politics – the politics of Pakistani revolves around him and shall continue to revolve for all times to come. In short he continues to rule from the grave. As a matter of fact this theses is also testified by the famous American historian in his famous book on Shaheed Baba Bhutto entitled, “Zulfi Bhutto of Pakistan” writes, “Millions of Pakistanis still hail Zulfi Bhutto as their Quaid-e-Awam (Leader of the People) even as they do Muhammad Ali Jinnah as Pakistan’s Quaid-e-Azam – that is a Great Leader.
SMBB is the real heir of Shaheed Baba’s legacy and the torchbearer of Bhuttoism. It is matter of immense greatness that she was able to keep the party together for about thirty years since Shaheed Bhutto was physically removed from the political scene of Pakistan on the fateful day of 04 April 1979, by a ruthless and shameless dictator whose name doesn’t deserve to be posted in this article alongside the names of the two great shaheeds of the party. SMBB knew the great Quaid more than any body lese. According to SMBB in her message (on the occasion of 04 April 2006) she writes, “to consolidate its hold on power, the military dictatorship always ruthlessly resorts to targeting the mainstream political parties through horse trading, coercion, and inducements. However as Bhuttoism lives on, they almost always had failed to deceive the people, who are children of the democratic dream of Quaid-e-Azam and Quaid-e-Awam in to abandoning the mainstream political parties.” According to her, Quaid-e-Awam opposed “rentier mentality” that lies at the heart of military dictatorships and creates the crisis that damage national integrity as well as impoverish the people of Pakistan. She also added that Baba Bhutto believed that Pakistan’s true wealth lay in its people. “He strived to take Pakistan from the bullock age to the atomic age”, she added. SMBB also writes that he gave hope to the millions of Pakistanis living in poverty by telling them that it was not birth or class but hard work and knowledge that would determine their future. He created a new middle class and sent Pakistanis overseas to work and earn foreign exchange for their country. At that time they were all welcomed with open arms because Islamabad’s standing at that time had reached the skies. In sharp contrast and all due to Zia and Musharraf, the presentation of Pakistani passports today at an immigration desk in the world cities sadly means suspicion. The dictators very well knew that Bhuttoism was antitheses of the rentier politics and this explains their opposition to PPP and to Bhuttoism.

The people of Pakistan trusted his words and actions and the Quaid-e-Awam believed that the strength of a political party came from the people. This explains the cardinal basic slogans formulated at the time of founding of PPP which says “Taqat Ka Sarchashma Awam Haen” – meaning of all powers to the people. It is interesting to mention here that when Shaheed Baba had launched his party in 1967, General Musa – an apostle of Ayub Khan – had mocked him and the PPP by claiming that it had only “rickshawalas and tongawalas” in it. However, following the dictates Bhuttoism, the brave people of Pakistan at that time had rallied around him with full commitment and devotion. The common men at that time were utterly sick and tired of the drawing room politics prevalent at that time wherein a small group of elites belonging to the bureaucracy and the security decided the destiny of the nation. The people at that time had said they would vote for the PPP even if it gave ticket to a lamppost. And, the world was witness to the fact that the people indeed voted for Bhuttoism, as they wanted to take charge of their lives. 

Today Pakistan is faced with undaunted challenges, which directly affect common man’s lives. It is time for the people to take charge of their lives all over again. It’s time to revert to Bhuttoism. 04 April 1979 reminds us all of the following famous poetry line:

Yeh Baazi Jaan Kee Baazi Haey Yeh Baazi Tum Hee Haro Ge. Har ghar Sey Bhutto Nikley Ga Tum Kitne Bhutto Maro Gey? 

Meaning, this bet is that of life, which you ought to lose. How many Bhuttos would you kill as every house in Pakistan shall produce yet another Bhutto?

میرے ہاتھوں تین بار شکست کھانے والے اب چوتھی بار بھی شکست کے لئے تیار ہو جائیں: میاں منظور احمد وٹو

DSC_4079

پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر اور حلقہ این اے 146-147 اور پی پی 188 سے پیپلز پارٹی کے امیدوار میاں منظور احمد وٹو نے کہا ہے کہ اندھیروں کا دشمن ہوں ، وعدہ کرتا ہوں کہ منتخب ہو کر اوکاڑہ سمیت پنجاب کے ہر دیہات میں بجلی پہنچاؤں گا – انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ آنے والے عام انتخابات کے نتائج قومی سیاست کا نیا رخ متعین کریں گے اور پیپلز پارٹی پنجاب سمیت تمام صوبوں میں عوامی راج قائم کرے گی – انتخابی مہم کے دوران اپنے صاحبزادے خرم جہانگیر وٹو امیدوار پی پی 193 کے ہمراہ ماہموں کے ، بصیر پور ، محلہ چک ابراہیم ، چک باوا ،باہمنی پنڈ، چک جوائے بلوچ، موضع چک برید ، چاہ ڈینگے والا ، اقبال نگر ، پٹھان کوٹ ، نور کالونی اور متعدد نواحی علاقو ں میں کارنرمیٹنگز سے خطاب کے دوران میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ شہباز شریف کو وزیر اعلی پنجاب نہیں ، فیروز پور روڈ کا مئیر ہونا چاہئے ، انہوں نے کہا کہ میرے ہاتھوں تین بار شکست کھانے والے اب چوتھی بار بھی شکست کے لئے تیار ہو جائیں ، انہوں نے کہا کہ شہروں میں عمران خان اور دیہاتوں میں پیپلز پارٹی پنجاب بھر میں ن لیگ کا صفایا کر دے گی – انہہوں نے کہا کہ شہید بھٹو نے غریب عوام کو طبقاتی امتیاز سے بچانے اور تمام شعبوں میں آگے بڑھنے کے یکساں مواقع فراہم کرنے کے لئے انقلابی سوچ پر مبنی پارٹی منشور وضع کیا اور عوامی مقبولیت کا نیا عالمی ریکارڈ قائم کیا – انہوں نے کہا کہ عالمی اجارہ دار طاقتیں عالم اسلام کے اتحاد کے لئے شہید بھٹو کی فقید المثال کامیابیوں خصوصا” اسلامی سربراہی کانفرنس کے کامیاب انعقاد پر خوفزدہ ہو گئیں – عالمی اجارہ داری قوتوں نے اسی خوف کے تحت سازش کر کے شہید بھٹو کو اقتدار سے ہٹایا اور پھر ان کو شہید کر دیا گیا –
اگر شہید بھٹو کچھ عرصہ مزید زندہ رہتے تو آج پاکستان ، جنوبی ایشیاء اور امت مسلمہ کی حیثیت بہت بلند ہوتی اور سازشوں کے بل بوتے پر پسماندہ اور ترقی پذیر اقوام کے وسائل ہتھیانے والے اپنے انجام کو پہنچ چکے ہوتے – انہوں نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو نے 73 ء کے آئین کے تحت عوام کو براہ راست اپنے نمائندوں کو منتخب کرنے کااختیار دیا ، میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ 11 مئی ملک و قوم کے مستقبل کے حوالہ سے بہت اہم دن ہے ، اس روز اصل فیصلہ امیدواروں کی ذات یا کسی برادری یا پارٹی سے وابستگی نہیں بلکہ ملک و قوم کے ساتھ کمٹمنٹ ، کارکردگی ، منشور اور ترجیحات کی بنیاد پر ہو گا -انتخابی جلسوں اور کارنرمیٹنگز سے خرم جہانگیر وٹو ، میاں نواب خان کلس ، محمد خان باریکا ، ، میاں بگا خان بریت ، تنویر پریت ، میاں شان محمد گودارہ، میاں عبدالحق گودارہ ، معشوق علی ہنجرا، میاں احمد یار چوہان ، وقار احمد ہنجرا، محمد امین پریت ، عطا محمد وٹو ،محسن اکرم خان بلوچ،خواجہ معین الحق آستانہ محمد اکبر شریف بصیر پور ، میاں فار وق علی جوڑا، میاں خوشی محمد جوڑا چھچھر ، میاں بشارت چھچھر سابق ناظم ، رحمانی برادری بصیر پور کے حاجی عبدالغفور رحمانی سمیت متعدد پیپلز پارٹی کے علاقائی رہنماؤں نے بھی خطاب کیا اور میاں منظور احمد وٹو کے صاحبزادیوں محترمہ جہاں آراء وٹو ، روبینہ شاہین وٹو اور خرم جہانگیر وٹو کی کامیابی کے لئے بھرپور تعاون کا یقین دلایا-

A leader with vision~Syeda Fiza Batool Gilani.

A leader with vision~Syeda Fiza Batool Gilani.

 

The stage was set and the moment had arrived. It was time to introduce the next generation of Bhutto and Zardari to the world– Bilawal, Bakhtawar and Assefa. Who would have imagined that these children, who had always preferred to stay away from the glitz and paranoia of the dangerous world of politics would one day be entering it albeit, owing to circumstances neither to their liking nor of their own doing. But it was the tragic and unfortunate assassination of their beloved mother that invoked them to change course and set afoot on a dangerous path trodden with surprises and anguish. While friends of Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto say she always envisaged Bilawal becoming her political heir, they agree that she would not have wanted him to have to bear such a burden so young.

 

In an interview in 2004, Bilawal Bhutto Zardari was asked if he wanted to enter Pakistani politics. “We will see, I don’t know. I would like to help the people of Pakistan, so I will decide when I finish my studies,” he said.

 

Today, he stood tall being forced into a decision much earlier than he would have imagined then.

 

A person’s character is best judged once he is pitted against odds. Bilawal had to endure the loss of his mother when he so needed her to be around him to pamper him, to love him and to see him grow. Yet he lost it all in the flash of a second. It was at this crucial moment in his life that there emerged a leader out of him in whose voice echoed the words of his mother “democracy is the best revenge”.

 

All these thoughts resonated through my head and my eyes flooded with tears as I sat in the Presidency on the 18th of July 2009, listening to the magnanimous speech delivered by Bilawal Bhutto Zardari, Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto’s only son and the Chairman of the Pakistan People’s Party. The event was attended by the parliamentarians and ticket-holders of Pakistan People’s Party, who had been awarded tickets for the elections by Mohtarma Benazir Bhutto herself in 2007, along with their children and families.

 

This was not the first time that I had met Bilawal, Bakhtawar or Assefa, yet there was something different about Bilawal tonight. This young man standing on the podium, talking to the members of the party, formulated by his grandfather and nourished by his mother had come a long way from the libraries of Christ Church, Oxford. Today, he seemed like an embodiment of perfection, ideally suited to hold the reigns as a true heir to the legend of the party; a people’s man, a true Bhutto.

 

There were many who had gone to the event with doubtful minds. They wondered as to whether this young lad in his twenties, who did not even reside in this country, could be entrusted with the enormous responsibility of leading the largest political party of this country and in future, the country itself. And this is what he had to say to clear the doubts of one and all. “The Pakistan People’s Party can and will solve all challenges. As the future generation, what can we promise the people of Pakistan? We can promise them that we shall deliver what our older generation has not yet delivered.”

 

There was resolve, commitment, resoluteness but most importantly, there was recognition and acceptance of the fact that promises made had not entirely been fulfilled yet and it was the right of the people of Pakistan to point out the anomalies of the government in addressing the needs of the people.

 

This coming from the chairman of the party that is in government is a big accolade and surely, we Pakistanis are not used to such true self analysis and accountability.

 

On that evening, everybody present there saw Shaheed Zulfikar Ali Bhutto come to life again in Bilawal Bhutto Zardari. This young man has the potential, the capability and the courage to lead this party and this country forward. As I listened to Bilawal with tears in my eyes, I felt hope, hope that I had long forgone since the Shahadat of Mohtarma Benazir Bhutto. It just occurred to me sitting there that this was what Mohtarma meant once she aptly titled her last book ‘Reconciliation’. It is time to reconcile with the fact that the next generation of the Bhuttos is ready, ready to take on from where their predecessors left and when Bilawal says, “Khoon chaihay, khoon dein gay; sir chahiyay, sir dein gay, jaan chahiyay, jaan dein gay,” you know that this young man really means it because his name ‘Bilawal’ means “one without equal”.

خود کو مغل شہزادے سمجھنے والے شریف برادران کوعوام کی تکالیف کا احساس کیسے ہو سکتا ہے: میاں منظور احمد وٹو

DSC_3590

پاکستان پیپلز پارٹی کے صدر اور حلقہ این اے 147 146-سے پیپلز پارٹی کے امیدوار میاں منظور احمد وٹو نے کہا ہے کہ میں کوئی فرشتہ نہیں انسان ہوں ، میرا مقابلہ فرشتوں سے نہیں میرے مقابل امیدواروں سے کریں اگر میرا پلڑا ان کے مقابلے میں آپکو بھاری لگے تو مجھے ووٹ دیں -انہوں نے کہا کہ میں نے صدر آصف علی زرداری سے کہا تھا کہ ہم حالت جنگ میں جا رہے ہیں اورفتح کیلئے ترکش کے سارے تیر چلائیں گے ، کوئی ایک تیر بھی بچنے نہیں دینگے اگر کوئی ایک تیر بچا تو خود کو مار لیں گے – اپنے انتخابی حلقوں میں میاں معظم جہانزیب وٹو ، خرم جہانگیر وٹو اور محترمہ جہاں آرا وٹو کے ہمراہ کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میں آپکی خدمت کر سکا ہوں یا نہیں آپ بہتر فیصلہ کر سکتے ہیں – انہوں نے کہا کہ میں حلقہ کے عوام کی محبت اور چاہت کو کبھی نہیں بھلا سکتا میں جیل تھا تو میری بیٹی روبینہ شاہین وٹو کو آپ نے 21 ہزار ووٹوں کی لیڈ سے جتوا کر میرے ساتھ خلوص اور محبت کا اظہار کیا – انہوں نے کہا کہ جس روز محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت ہوئی تھی اسی روز میں نے فیصلہ کر لیا تھا کہ مجھے شہیدوں کی پارٹی کے ساتھ چلنا ہے اور میں آزاد حیثیت سے الیکشن جیت چکا تھا مگر میں نے پیپلز پارٹی میں شمولیت اختیار کی اور اب میرا جینا مرنا اسی پارٹی کے ساتھ ہے ، کیونکہ یہی وہ پارٹی ہے جس کے قائدین نے اپنے عوام کے لئے موت کو بھی گلے لگایا – میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ خود کو مغل شہزادے سمجھنے والے شریف برادران کوعوام کی تکالیف کا احساس کیسے ہو سکتا ہے ، 70 ارب روپے کے خطیر وسائل صرف ایک اربن روٹ پر ضائع کر دینے والے اگر یہی قومی سرمایہ توانائی کے کسی منصوبے پر خرچ کرتے تو لوڈ شیڈنگ کے اندھیرے کم ہو سکتے تھے-انہوں نے کہا کہ ن لیگ محروم و پسماندہ اور نظر انداز علاقوں سے ووٹ تو لینا چاہتی ہے مگر ان سے کئے گئے وعدے پورے کرنے کو تیار نہیں اور کاٹن زون کی کمائی صرف لاہور ایک ایک اربن روٹ پر سہولیات کی فراہمی کیلئے محض اس لئے خرچ کئے گئے کہ اسی اربن روٹ پر ان کے اپنے سابقہ اور موجودہ عظیم الشان محلات واقع ہیں- میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ عام انتخابات کے بعد یہ لوگ عوام سے منہ چھپاتے پھریں گے ، انہو ں نے کہا کہ انتخابات کے بعد وفاق اور تمام صوبوں میں پیپلز پارٹی کا عوامی راج قائم ہو گا- انہوں نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی کی منتخب جمہوری حکومت نے سیاست کو روائتی آلودگی سے پاک کرنے کے ساتھ ساتھ انسانی حقوق کا تحفظ یقینی بنانے کے لئے مثالی کام کئے ، پہلی بار انسانی حقوق کی مکمل وزارت تشکیل دی گئی ، ریکارڈ قانون سازی کی گئی اقلیتوں اور پسماندہ طبقات کے بنیادی حقوق کیلئے ہر ممکن اقدامات اٹھائے گئے ، آئینی ایکٹ-A 19 کے ذریعے معلومات تک رسائی کے حق کو قانونی حیثیت دی گئی ، انہوں نے کہا کہ قومی تاریخ میں یہ پہلی حکومت ہے جس کے پانچ سالہ دور میں ایک بھی سیاسی قیدی نہیں ، عدلیہ اور میڈیا آزادی سے موثر کردار ادا کر رہے ہیں ، تمام اداروں کو آئینی حدود میں رہتے ہوئے آزادانہ اور موثر کارکردگی کا موقع فراہم کیا گیا ، اقلیتوں کے تحفظ اور فلاح و بہبود کیلئے متعدد ٹھوس اقدامات کئے گئے ،، انہوں نے کہا کہ پہلی حکومت ہے جس نے خواتین کے حقوق اور انکے تحفظ کے لئے بہترین قانون سازی کی ، ، 70 لاکھ خواتین کے خاندان کو بے نظیر انکم سپورٹ کے ذریعے زندہ رہنے کا حوصلہ دیا -انہوں نے کہاکہ عجیب بات یہ ہے کہ پیپلز پارٹی کے دور میں پیپلز پارٹی کا وفاقی وزیر زیر حراست رہا ، انہوں نے کہا کہ حکومت کے پانچ سالہ دور حکومت میں مخالفوں کے خلاف کوئی انتقامی کارروائی نہیں کی گئی ،، جبکہ حقیقت یہ ہے کہ حقائق پر مبنی مقدمات کو بھی نہیں کھولا گیا ، انہوں نے کہاکہ پی پی پی کا دور حکومت سیاسی رواداری کی بہترین مثال رہاہے – انہوں نے کہا کہ عوام باشعور ہیں اور وہ میرٹ پر ہی اپنے ووٹ کی پرچی کا درست استعمال کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی کو پہلے سے زیادہ تائید سے سرفراز کریں گے ، تاکہ جمہوریت مضبوط ہو اور ملک و قوم ترقی کی شاہراہ پر گامزن ہو سکیں ،دیپالپور، بصیر پور ، رینالہ خورد، حجرہ شاہ مقیم ، سوبھا رام، سکھ پور وٹوواں والا ، بستی چشتی شام دین ، راجووال ،جھگیاں رحموں والا ،خان بہادر گاؤں اور بصیر پور سمیت متعدد علاقوں میں کارنر میٹنگز اور انتخابی جلسوں سے میاں معظم جہانزیب وٹو ، محترمہ جہاں آرا ء وٹو ، سابق وفاقی وزیر سید صمصام علی بخاری ،سید عباس رضا رضوی ، راؤ قیصر علی، راؤ اعجاز خان ، ندیم پٹھان ، حاجی ناصر خان ، حاجی ندیم ،ملک تحسین کھوکھر ، غلام احمد بودلہ ، چوہدری اختر خان ، عباس خان ، شہباز خان وٹو ، پیر محمد علی چشتی ، چوہدری بشیر احمد ، عبدالرشید چوہدری ، اشرف حسن چوہدری ، امجد حسن چوھدری ، جہانگیر نمبردار ، سردار عبدالوحید کمبوہ، سابق نائب ناظم راجووال ، پیر وقار شاہ کرمانی ، ملک خضر حیات ماڈھا سابق ناظم یوسی راجووال ، ، محمد امیر نے اپنے خطاب میں مخالفین کی جبر کی سیاست کے خاتمہ اور میاں منظور احمد وٹو اور انکے ساتھ تمام صوبائی امیدواروں کو فتح دلانے کے عزم کا اظہار کیا

شریف برادران کا اقتدار میں پھر آنے کا خواب ادھورا رہے گا, 11مئی کو شریف قصہ پارینہ بن جائیں گے: میاں منظوراحمد وٹو

DSC_3569

پاکستان پیپلزپارٹی پنجاب کے صدر میاں منظوراحمد وٹو نے کہا کہ شہباز شریف کی لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی سنجیدگی کا اس بات سے اندازہ ہوتا ہے کہ کبھی کہتے ہیں کہ چھ مہینے میں اس پر قابو پا لیں گے ۔ پھر ایک سال کے بعد ، دو سال کے بعد اور اب وہ تین سال کے بعد اس کو ختم کرنے کے دعوے کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ شہباز شریف کی یاداشت کمزور ہے اور ایسی ذہنی کیفیت کے سیاستدان کو امورمملکت میں شامل کرنا تباہی کو دعوت دینے کے مترادف ہے ۔
انہوں نے کہا کہ ان کے کھوکھلے دعوے بھی 11مئی کے بعد انکے ساتھ ہی ہوا میں تحلیل ہو جائیں گئے ۔
میاں منظور وٹو نے کہا کہ وہ پاکستان کے عوام کو کسی خاطر میں نہیں لاتے اور سمجھتے ہیں کہ وہ ان کو دھوکا دے سکتے ہیں جو ان کی فاش غلطی ہے ۔
انہوں نے کہا کہ نواز شریف اور جنرل مشرف دونوں ہی پاکستان میں لوڈشیڈنگ کے ذمہ دار ہیں کیونکہ انہوں نے اپنے 26سالہ دورحکومت میں ایک میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے منصوبے کو عملی جامہ نہیں پہنایا ۔
اسکے برعکس ، انہوں نے کہا کہ نواز شریف نے شہید بینظیر بھٹو کے غیر ملکی سرمایہ کاروں سے000 24 میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے معاہدے منسوخ کر دیئے ۔
انہوں نے کہا کہ بیرونی سرمایہ کاروں کے خلاف گرفتاری کے احکامات دیکر نواز شریف نے ان کو ملک سے بھاگنے پر مجبور کر دیا۔
انہوں نے کہا کہ اب شریف برادران لوڈشیڈنگ پر مگر مچھ کے آنسو بہارہے ہیں لیکن عوام ان کے کردار سے بخوبی واقف ہیں جس کا مظاہرہ وہ 11مئی کو ان کے خلاف ووٹ دے کر کریں گے ۔
انہوں نے یاد دلایا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو نے فرانس کے ساتھ 22سومیگا واٹ نیوکلیر ری پروسیسنگ پلانٹ کا معاہدہ کیا تھاتاکہ لوگوں کو سستی بجلی کا حصول ممکن ہو ۔ انہوں نے مزید کہا کہ نواز شریف کے سرپرست ضیاء الحق نے اسکو منسوخ کر دیا۔
انہوں نے کہا کہ اپنے سرپرست کے نقش قدم پر چلتے ہوئے نواز شریف نے شہید بینظیر بھٹو کے 24000میگاواٹ کے معاہدے منسوخ کر دئے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر ان معاہدوں کو منسوخ نہ کیا جاتا تو پاکستان میں آئندہ کئی دھائیوں تک بھی لوڈشیڈنگ کا مسئلہ پیدا نہ ہوتا ۔
میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پچھلی پیپلزپارٹی کی جمہوری حکومت نے ایران پاکستان گیس پائپ لائن کا افتتاح کر کے بجلی کے بحران پر قابو پانے میں بڑی اہم پیش رفت کی ہے کیونکہ اس سے اگلے سال کے آخر تک پانچ ہزار میگاواٹ بجلی پیدا ہو سکے گی ۔
انہوں نے کہا کہ شریف برادران کا اقتدار میں پھر آنے کا خواب ادھورا رہے گا کیوں کہ پاکستان کے عوام ، میڈیا اور سول سوسائٹی ان کے ماضی کو اچھی طرح جانتی ہے اور 11مئی کو ان کے خلاف ووٹ دیکر ان کو ملک کی سیاست میں قصہ پارینہ بنادے گی۔